اسلام آباد: وزیراعظم کے سیکریٹری فواد حسن فواد نے کہاہے کہ نجی اخبارڈان نیوز میں ’پاک چین اقتصادی راہداری کا اصلی منصوبہ‘ کے نام سے چھپنے والا آرٹیکل اس فرسودہ تجویز پر مبنی ہے جو چائنہ ڈوپلمنٹ بینک کی جانب سے 2015میں پیش کی گئی اور یہ پاکستان اور چین کے درمیان ہونے والا اصل معاہدہ نہیں ہے۔

نجی انگریزی اخبار ڈان میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ یہ معاہدہ پاکستان اور چین کے درمیان ہونے والا حتمی معاہدہ ہے۔ مضمون میں چین کی پاکستان کے حوالے سے آئندہ عشرے کے متعلق ترجیحات اور ارادوں پر بات کی گئی تھی جسے حکومت نے ڈان لیکس ٹو قرار دیا ہے۔

وفاقی وزیر احسن اقبال نے لاہور سے شائع ہونے والے نجی اردو روزنامہ پاکستان سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ڈان کی رپورٹ مکمل طور پر حقائق کے منافی ہے اور جن دستاویزات پر رپورٹ بنائی گئی ہے،یہ فرسودہ تجویز چائنہ ڈوپلمنٹ بینک کی جانب سے دی گئی تھی جس پر کسی قسم کا عمل درآمد نہیں دیا گیا جب کہ اصلی معاہدے میں دو طرفہ دستاویزات ہیں جن پر دستخط ہونا ابھی باقی ہیں اور ہم اسے اپنے شراکت دار کے ساتھ بات چیت کے بغیر کس طرح عوامی سطح پر لا سکتے ہیں۔

فواد حسن فواد کا کہناتھا کہ جن دستاویزات پر نجی اخبار کی خبر مبنی ہے وہ حقیقت میں اصل معاہدے سے کوئی مطابقت نہیں رکھتے اور وہ پاکستان کی جانب سے پہلے ہی مسترد کیے جا چکے ہیں اور اس میں کئی ترامیم بھی کی گئیں ہیں۔

ان کا کہناتھا کہ یہ تجویز 2015میں چینی بینک کی جانب سے پیش کی گئی تھی جسے چین نے خود ہی واپس لے لیا تھا ۔انہوں نے کہا کہ دستاویزات پر حتمی مشاورت جاری ہے اور اسے حتمی شکل دینے کے بعد باہمی اتفاق رائے سے سامنے لایا جائے گا ۔

وفاقی وزیر احسن اقبال نے ڈان نیوز کے آرٹیکل کی تردید کرتے ہوئے اسے ’ڈان لیکس II‘قرار دیا ۔ان کا کہناتھا کہ تھا کہ مجھے ڈان لیکس IIسے بہت حیرت ہوئی ۔ان کا کہناتھا کہ اس طویل پلان کو پاکستانی حکومت چین سے مشاورت کے بغیر منظر عام پر نہیں لاسکتی ۔انہو ںنے ڈان نیوز کی خبر کو ’ہاف ککڈ‘ قرار دیاہے۔

Subscribe for our email updates…

Email

Raah Tv Live

About Raah TV

Raah TV is a Pakistani infotainment web channel with a vision to promote positivity, optimism and hope.