مشی گن: امریکی ماہرین نے کہا ہے کہ چین سائنسی تحقیق میں بہت جلد امریکاکو پیچھے چھوڑدے گا اور امریکا سائنسی تحقیق میں اپنی برتری برقرار نہیں رکھ سکے گا۔

یونیورسٹی آف مشی گن کے ماہرین نے گزشتہ 15 برس میں چین سے شائع ہونے والے تحقیقی مقالوں کا جائزہ لینے کے بعد کہا ہے کہ بایومیڈیکل تحقیق میں امریکی کی نمبر ایک پوزیشن خطرے میں ہیں کیونکہ چینی ماہرین طبی حیاتیات میں بہت عمدہ اور بڑی تعداد میں تحقیق کرکے مقالے شائع کررہے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق  یونیورسٹی آف مشی گن میں پروفیسر آف فزیالوجی اینڈ میڈیسن بشر اوماری کہتے ہیں کہ چین نے اس شعبے میں غیرمعمولی سرمایہ کاری کی ہے اور یہی اس کی ترقی کی اہم وجہ بھی ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ  اگرچہ امریکاعالمی سائنسی افق اور تحقیق و ترقی ( آر اینڈ ڈی) میں آگے رہے گا لیکن بایومیڈیکل ریسرچ کے شعبے میں وفاقی سطح پر مدد میں کمی واقع ہوئی ہے جس سے امریکایہ مقام کھو سکتا ہے۔

حال ہی میں امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ نے بایومیڈیکل تحقیق کے فنڈز میں واضح کمی کا اعلان کیا ہے،جس میں غریبوں کے لیے صحت کی سہولیات، وبائی امراض پر تحقیق، بوڑھوں اور معذوروں کے معالجاتی فنڈز میں کمی،ایڈز کے بجٹ میں کٹوتی اور دیگر اقدامات شامل ہیں اور ان کا اعلان 23 مئی کو کیا گیا تھا،پہلے یہ فنڈنگ 32 ارب ڈالر تھی جو اب 26 ارب ڈالر کردی گئی ہے۔

یاد رہے کہ  خود چین بھی سائنسی تحقیق کا عالمی لیڈر بننے پر شدید خواہاں ہیں ،اس کے علاوہ چینی جامعات یورپ اور امریکاکے مشہور دماغوں کو غیرمعمولی تنخواہوں پر اپنے ملک میں کام کی ترغیب بھی دے رہی ہیں۔

 

Subscribe for our email updates…

Email

Raah Tv Live

About Raah TV

Raah TV is a Pakistani infotainment web channel with a vision to promote positivity, optimism and hope.