سرگودھا: جماعت اسلامی پاکستان کے سربراہ سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ احتساب کا کڑا نظام بنایا جائے۔ نیب کے سربراہ کا تقرر چیف جسٹس آف پاکستان اور چاروں صوبائی چیف جسٹس صاحبان مل کرکریں۔ غریب کو دو ہزار بجلی کا بل جمع نہ کروانے پر پکڑ لیا جاتا ہے مگر قومی سلامتی کے مجرموں کو کھلی چھوٹ ملی ہوئی ہے۔

پیر کو ڈسٹرکٹ بار سرگودھا اور بعد ازاں ورکرز کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ اگر عدالتوں سے انصاف نہ ملا تو کرپشن کے خلاف لڑائی چوکوں اور چوراہوں میں ہوگی۔جے آئی ٹی کے نتیجے میں حکمران خاندان کو ساٹھ دن کی عبوری ضمانت ملی ہے۔ پانامہ لیکس پر ساری دنیا میں فیصلے ہوگئے لیکن ہم جے آئی ٹی میں پھنس گئے۔

ان کا کہنا تھا کہ پانامہ لیکس میں دنیا بھر میں جن حکمرانوں کے نام آئے ہیں وہ رضاکارانہ اقتدار سے الگ ہوگئے لیکن ہمارے وزیراعظم ابھی تک اقتدار سے چمٹے ہوئے ہیں ۔ پوری قوم ان سے مطالبہ کر رہی ہے کہ وہ کرسی چھوڑ دیں تاکہ وہ تحقیقات پر اثر انداز نہ ہوسکیں لیکن ان پر کوئی اثر نہیں ہوتا۔

سراج الحق کا کہنا تھا کہ ڈان لیکس قومی سلامتی کا معاملہ ہے اس کے نام پر قوم سے مذاق کیا جارہا ہے، یہ اداروں کا نہیں 20کروڑ عوام کا مسئلہ ہے۔الیکشن میں پیسے کا عمل دخل ختم کیا جائے۔

جماعت اسلامی کی حکمت عملی بیان کرتے ہوئے انہوں نے کہا ہماری خواہش ہے کہ ایوان میں ایسے لوگ منتخب ہوکرجائیں جوچوروں، ڈاکوں کا راستہ روکیں۔ ملک میں ووٹ سے ہی تبدیلی آئے گی عوام اپنا رویہ بدلیں اور چوروں سے ملک کو نجات دلائیں۔

انہوں نے تجویز دی کہ الیکشن کمیشن جیسے یوٹیلٹی بلوں کا امیدواروں سے پوچھتا ہے ویسے ہی اس بات کا بھی پوچھے کہ اس نے بہن اور بیٹی کو وراثت میں حصہ دار بنایا ہے کہ نہیں۔

سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ میں سرگودھا کی عوام کے پاس بڑی امید لے کرآیا ہوں۔ ملک میں نہ پٹوار خانہ بدلا نہ انگریز کا نظام بدلا، بدلا تو حکمرانوں کا خزانہ بدلا۔ انہوں نے عوام سے کہاکہ روشن مستقبل کے لیے جماعت اسلامی کا ساتھ دیں ۔ جماعت اسلامی ملک میں شریعت اور قانون کی حکمرانی چاہتی ہے۔

Subscribe for our email updates…

Email

Raah Tv Live

About Raah TV

Raah TV is a Pakistani infotainment web channel with a vision to promote positivity, optimism and hope.