خبریں

خارجہ پالیسی نہیں بدلیں گے،قطر کااعلان

دوحہ: ترکی کی جانب سے اپنے تین ہزار فوجی قطر ایئر بیس پر پہنچانے کے اعلان کے بعد قطر کا موقف بھی سامنے آ گیا ہے جس میں کہا گیاہے کہ ترک فوجی دستے خطے کی حفاظت کیلئے آ رہے ہیں۔

 قطری وزیرخارجہ نے اپنے حالیہ بیان میں واضح کیا ہے کہ ان کے ملک میں امریکی بیس کے کام میں کوئی تبدیلی نہیں ہو گی۔

دنیا بھر میں سب سے زیادہ فی کس آمدن رکھنے والے ملک کے رہنما کا کہناتھا کہ قطر خلیجی ریاستوں کے ساتھ تعلقات کو ٹھیک کرنے کیلئے اپنی خارجہ پالیسی بدلنے کیلئے تیار نہیں ہے اور نہ ہی اس پر کوئی سمجھوتہ کیا جاسکتاہے۔

ان کا کہنا تھا کہ بحران کا کبھی بھی کوئی فوجی حل نہیں ہو گا،قطرکی فوج میں تبدیلی نہیں ہوئی نہ ہی فوجی دستے کہیں بڑھائے گئے۔ ان کا کہناتھا کہ متحدہ عرب امارات کی 40 فیصد توانائی قطر کی قدرتی گیس پر انحصار کرتی ہے،یو اے ای تجارتی پوزیشن کو سیاسی حربے کے طور پر استعمال کر رہاہے۔

انہوں نے کہا کہ کسی دشمن ملک سے بھی ایسی جارحانہ کارروائیوں کا سامنا نہیں ہوا ہے،خوراک،اشیاخوردونوش کی صورتحال سے پریشان نہیں،ایسے رہ سکتے ہیں۔

قطری وزیر خارجہ کا کہناتھا کہ ابھی تک کوئی واضح مطالبات سامنے نہیں آئے ہیں ،بحران کاسفارتی حل اب بھی ہماری ترجیحات میں شامل ہے،خلیجی بحران پورے خطے کے استحکام کے لیے خطرہ ہے،ہمیں تنہاکیاجارہاہے کیونکہ ہم کامیاب اور ترقی کررہے ہیں۔

ٹیگ

متعلقہ مضامین

Close